حیات تجھ سے، زمانہ تیرے خرام سے ہے



حیات تجھ سے، زمانہ تیرے خرام سے ہے

یہ کائنات تیرے اِسم کے دوام سے ہے  !

 

تیرا وجود ہی روشن ہے دوش و فردا میں

بقائے دہر یقیناً تیرے قیام سے ہے

 

عجیب  ربط  تیری  ذات سے  ثبات کو ہے 

کہ دشتِ کرب و بلا بھی تیرے خیام سے ہے

 

ہم  ایسے  خاک نسب  لوگ  سَر بلند  ہوئے

کہ ہم پہ اُتری ہوئی شام  تیرے نام سے ہے!

 

حسین ؓ!   تیرا  حوالہ  مِلے  تو  پوری  ہو

یہ زندگی، کہ جو  تقسیمِ صبح و شام  سے ہے

 

میرا  لِکھا  ہُوا  ہر  لفظ  معتبر  ہو  گا

میرا لکھا ہوا ہر لفظ تیرے نام سے ہے!

 

ہے پیش فردِ عمل  اور مطمئِن ہوں ، تُرکؔ  !!

ہزار  شُکر کہ  نسبت مری  اِمام  سے  ہے






Comments