بجناب امام عالی مقام علیہ السلام



مدّاحیِ شبیرؑ میں آغازِ سخن ہے

اجماعِ شرف آج سرِ برجِ دَہن ہے

لب ہیں کہ دوپارہ صدفِ صبحِ چمن ہے

وہ چال ہے یا حسنِ محبت کا چلن ہے

تن ہے کہ مہ و مہر خجل ہوں اُسے دیکھے

چہرہ ، سببِ زینت و زیبائشِ تن ہے

ہم رنگِ سحر ہے، وہ مہِؑ شامِ غریباں

ہم چشمِ غزالانِ بیابانِ ختن ہے

اَبرو ہیں کہ قوسین پہ قوسین دھرے ہیں

پلکیں ہیں کہ آنکھوں پہ حیا ابر فگن ہے

توصیف کرے اصغر ؑ و اکبرؑ کی وہ کیسے؟

زینب کے لیے ایک حسین، ؑ ایک حسن ؑ ہے

ہر مسلکِ دیں، سلک بہ جاں ہے اسی دَر سے

یہ گلشنِ زہرا ہے ، امامت کا وطن ہے

پانی سے جو مچھلی کا ہے ، آدم سے ہوا کا

وہ ربط مودّت ہے، مودّت کا چلن ہے

ہنس دیجیے کھُل کر بھی تو آنسو نکل آئیں

کیا کہیے کچھ ایسی روشِ چرخِ کہن ہے

آنسو ابھی سر پھوڑ رہے ہیں رَگ و پے میں

اک حشر سا برپا پسِ دیوارِ بدن ہے

اک موج اُچھل کر سرِ داماں نہیں پہنچی

چلّوسی لحد میں فقط اک بوند بدن ہے

اک نورکا پیکر ابھی گزرا تھا اِدھر سے

اس گھور اندھیرے میں تو آہٹ بھی کرن ہے

ہم ہالۂ و ہم نالۂ شبیرؑ ہے اب تک

چپکا ہوا تن سے ابھی پیراہنِ تن ہے

اُترا نہیں دُلدُل سے مہِؑ شامِ غریباں

وہ رَو میں ابھی تک سرِ رہ وارِ سخن ہے

!اک تیر ہے پیوستِ گلو آج بھی خالد

اک درد ہے سینے میں کہ اعصاب شکن ہے






مصنف کے بارے میں


...

خالد احمد

1944 - 2013 |


خالد احمد




Comments