سلام



میرے  اخلاق میں شامل  ہوئی تعلیمِ  حسین
مجھ میں اجداد سے آئی خوئے تعظیمِ حسین

سارے   الفاظ   کیے  خرچ    مگر    خالقِ  فکر  
سانس   ہوتا    تو   سمجھ  آتے مفاہیم  حسین
 
کوئی  بھی جذب سے ہو عشق ضرب کھاتا  ہے
یعنی  امکان  میں  آتی   نہیں   تقسیمِ  حسین

شدتِ   غم    سے   محمد   نے   گلے   کو  چوما
تب  کہیں  جا  کے  مکمل  ہوئی  تفہیمِ  حسین

ایک تخریب    مقابل    تھی    مگر    بنتِ  علی
اپنی  تمہید    میں  کرتی  گئیں تجسیمِ حسین






Comments