اٹھتا ہے برابر آہ کا غل، سب قریے رنج کے مارے ہیں



اٹھتا ہے برابر آہ کا غُل، سب قریے رنج کے مارے ہیں
طیبہ سے زمینِ پاک تلک شبّیر ترے دُکھیارے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماتم کی سخت مناہی ہے،  ہر چوک پہ ایک سپاہی ہے
کوفے میں نبیؐ کے راج کُنوٙر ہر گام پہ مارے مارے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شبّیر جو خیمے سے نکلیں، جبریل کی آنکھیں ٹھنڈی ہوں
تعظیم کٙرٙن کو شاہِ ملک کربل میں آن پِدھارے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب جائے سواری اور کہاں، یہ قصر ہے چھوٹے حضرت کا
اک مشک سے چاندی بہتی ہے، دو سونے کے مینارے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نیزے کی انی پر چادر ہے،  خیمے کے سِرے پر مشعل ہے
محبوبِؐ خدا،  محبوبِؐ خدا،  گھبرا کر بال پکارے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گردن پہ بندھے ان ہاتھوں کی اللّہ دعائیں سنتا ہے
ہم سندھو دشت فقیروں کے یہ قیدی شاہ سہارے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
احمد جہاں گیر





مصنف کے بارے میں


...

احمد جہاں گیر

28Oct1984 - | Karachi


احمد جہاں گیر کا تعلق کراچی سے ہے باقاعدہ شاعری کا آغاز دو ہزار سولہ میں کیا فیس بک پر ایک گروپ میں پورے ملک سے تقریباً تین سو پختہ کار شعراء کے درمیان ہونے والے مقابلے میں پانچ لاکھ روپے کا پہلا انعام حاصل کیا فی الحال غزل کی صنف میں شعر کہتے ہیں اپنی غزل کی منفرد منفرد فضا بنا چکے ہیں




Comments