نعیم رضا بھٹی

...

نعیم رضا بھٹی

نعیم رضا بھٹی کا تعلق منڈی بہاءالدین سے ہے اپ ایسوسی ایٹ سول انجینئر ہیں اپ کا شمار اردو شاعری کے تازہ دم اور معتبر شاعروں میں ہوتا ہے۔ اپ نے مختصر مدت میں اپنی فکری ندرت اور فنی جودت کی بدولت اُس مقام تک رسائی پائی ہے جو قابلِ فخر بھی ہے اور لائقِ تقلید بھی۔ اپنے ہم عصر شعرا میں اُن کی آواز نہ صرف نمایاں و ممتاز ہے بلکہ بہ آسانی آگے نکلتی اور اپنے اوج کے نئے زاویے ترتیب دیتی دکھائی دیتی ہے۔ نعیم رضا بھٹی کی سب سے بھلی بات اور پہلے ذکر کیے جانے کے لائق خوبی‘ اُن کی شاعری میں گہرے تجربے اور احساس کی وہ فراواں حدّت ہے جو یک بیک قاری کو اُچک لیتی ہے۔ بالکل جیسے کوئی سحر پھونکے۔۔۔ صاف معلوم ہوتا ہے کہ شاعر جو کچھ کہہ رہا ہے اِس کا لفظ لفظ مسلسل حسی ادراک سے جُڑا ہوا اور ذات کی داخلی ریاضتوں میں پگھلایا ہوا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ لکھت آغاز ہی سے گھیرا ڈالنے لگتی ہے اور جوں جوں یہ عمل آگے بڑھتا ہے، محویّت کا اَن دیکھا حصار تنتا چلا جاتا ہے۔ چھوٹے چھوٹے منظر بتدریج اُترتے ہیں اور تصویر بننے لگتی ہے۔ یہ بالکل مصوّری کی طرح کا عمل ہے جیسے ماہر مصور کا ہر سٹروک تصویر کی ایک نئی جہت تخلیق کرتا ہے اور رنگوں کے امتزاج اور زاویوں کے جڑاؤ سے ایک شبیہ واضح ہوتی چلی جاتی ہے، اِسی طرح کا عمل نعیم رضا بھٹی کی شاعری میں بھی ہوا ہے۔ یہاں لفظوں کے برش سے منظر پینٹ کیے گئے ہیں