دھیان لگایا




دروازے میں سگریٹ پھیبکا اور خود کو سلگایا  
اندھیارے کمرے میں تیری یاد کا دیپ جایا  
اس دنیا کی تیز تریں شے  خیال پہ قابو پایا  
نہ سوچا کوئی جگنو تارا ،اور نہ سوچا سایا  
فکر کو ایڑھ دی اور خود کو تیرے کمرے میں پایا   
سوئے گال پہ جاگتی  زلف  کو  پھونکیں مار ہٹایا  
۔۔۔۔
سادھوملنے تجھ سے کتنے میلوں دور سے  آیا    
.......
تیرے ہاتھ کی بند مٹھی کو دھیرج سے پھیلایا   
جلتے ہوئے دو ہونٹ اور جلتا اک قطرہ ٹپکایا  
خوشبوئیں دیتی سانسوں سے اپنا مال چرایا۔۔۔۔۔
تیرے دل کی دھڑکن سے ٹائم گھڑیال ملایا   
اور پھر کان سے لگ کر تیرے سادھو نے فرمایا    ۔
۔
۔
کیا کوئی یاد آیا






Comments