عرض - نیاز- عشق کے قابل نہیں رہا || مرزا غالب








Comments