زنگ سار






Download Book
شاعری اگر درست طور پر نطق وبیاں کا عرق ہے تو یقیناً غزل کا شعر, شاعری کا اصل ہوگا ــ بات پھیلائیں تو نظم ازخود لہریے لینے لگتی ہے لیکن نظم کا پھیلاؤ کیسے علامات اوڑھ کر غزل کے ایک یا دو مصارع میں سمٹ آتا ہے یہ حیرت انگیز ہےــ عقیل ملک کے ہاں یہی حیرت آئینہ درآئینہ بہ یک وقت اجزا میں بھی منقسم ہے اور اجمال میں بھی جلوہ افروز ہے. رائج فریم میں غزل لکھنا ہوتی تو عقیل ملک بھی متعدد شعری مجموعوں کے مصنف ہوتے ــ فقط افقی بہاؤ میں اپنی مثالی غزل کی روش ہی جاری رکھتے تو آج غزل کا گلستاں ہوچکا ہوتا مگر انھیں تو نئی جہات کی نشان دہی بھی کرنا ہے, نئے لسانی ذائقے بھی روشناس کرانا ہیں اور تلازمات و علامات کے نئے نظام وضع کرکے اردو شاعری کے آئندہ آفاق بھی تشکیل دینا ہیں ـــ زنگ سار کی شاعری فطری احساسات کا ایسا اظہاریہ ہے جو سادہ دکھائی دیتے ہوئے بھی کئی انوکھے زاویے رکھتا ہے ــ سو ممکن ہے زنگ سار کے صفحات سے گزرتے ہوئے کسی مقام پر فہم کی ناؤ ہچکولے کھائے، اس کی وجہ یہ ہے کہ شعری جمالیات کی جن بلند تر سطحات کو یہ شاعری چھو رہی ہے منظرنامے پر چھائے ہوئے کئی شعرا کی آموزش اس بالیدگی سے آشنا ہی نہیں ہے ــ حقیقی تخلیق کاروں کی توجہ پر زنگ سار کو مطالعے کا حق حاصل ہے. یہ کتاب نہ صرف قاری کے ذوق شعری کو مسرت سے معمور کرے گی بل کہ اس کے دل ودماغ میں خالصتاً ادبی کاوش کی تحریک بھی پیدا کرے گی ــ یوں دیے سے دیاروشن ہوگا تو زبان اور تہذیب پر سچے ارتقا کے اجالے کا ظہورگا ــ غفران کامل ۔۔۔۔۔ طاہر اسیر ادارہ جمالیات اٹک 03120024488





Comments