لگ ہے ترک کے ٹپکے کوں یا مسلسل سرخ



مژہ بتاں کی ہیں تجھ غم میں خواب مخمل سرخ
لگ ہے ترک کے ٹپکے کوں یا مسلسل سرخ

کتاب عشق پہ شنگرف اشک خونی سوں
پلک کی کر کے قلم کھینچتا ہوں جدول سرخ

شفیق نہ بوجھ کہ مجھ آ، آتشیں نے ولی
فلک کوں جا کے کیا ہے برنگ منقل سرخ






مصنف کے بارے میں


...

ولی محمد ولی

1667 - 1725 | Deccan


ولی دکنی اردو غزل کے رجحان ساز کلاسک شاعروں کی اولین صف میں ہیں




Comments