میں بجھ چکا ھوں پھر بھی طرفدار ِ شب نہیں



میں بجھ چکا ھوں پھر بھی طرفدار ِ شب نہیں
میری سفید راکھ میں آثار ِ شب نہیں

سورج نے جانشین چُنا جس الاؤ کو 
وہ. نشہ ء نسب میں خبردار _ شب نہیں

بس استفادہ کیجئے , سودا نہ کیجئے 
میرا چراغ حصہ ء بازار _ شب نہیں

مجھ بے بصر کو رشک سے تکتے ھیں با بصر 
آزار ِ شب مرے لئے آزار ِ شب نہیں

جگنو ، ستارہ ، چاند سر ِ صبح کیا ھوئے 
شب زادگاں میں کوئی عزادار ِ شب نہیں

مجھ شمع_ کم نُما کے مسائل کچھ اور ھیں 
خوُرشید کے نواح میں دیوار ِ شب نہیں

روشن رکھا ھوا ھے تری بھوک نے تجھے 
میں گُل شدہ ھوں کیونکہ نمک خوار ِ شب نہیں

روشن خیال صبح پہ تشویش ھے مجھے
میرا معمہ عُقدہ ء اسرار ِ شب نہیں

شاھد مرا وجود گرفتار ِ شب سہی
مجھ میں جو روشنی ھے گرفتار ِ شب نہیں






Comments