محبّت ایسی عبادت کسک پہ ختم ہوئی



محبّت ایسی عبادت کسک پہ ختم ہوئی 
شروع حق سے ہوئی اور شک پہ ختم ہوئی

میں اپنی روح کی تمثیل کی تلاش میں تھا 
مری تلاش تمہاری مہک پہ ختم ہوئی

وہ خامشی جو کسی اور خامشی میں ڈھلی 
کوئی سڑک تھی جو اگلی سڑک پہ ختم ہوئی

اک ابتلا تھی جسے لمس کی کشش کہیے 
اک اشتہا تھی جو آب و نمک پہ ختم ہوئی

سیاہی چیخ اٹھی __ دوسری طرف دیکھو 
جب آئنے کی کہانی چمک پہ ختم ہوئی

کہا کہ آتش _ تخلیق مجھ پہ ظاہر ہو 
گھٹا دھنویں سے اٹھی اور دھنک پہ ختم ہوئی

مرا ہی عجز مرا آخری شکاری تھا
مری تنی ہوئی گردن لچک پہ ختم ہوئی

وہ رات جس میں کئ صبحیں جڑ چکا تھا میں 
تمہاری نیند کی پہلی جھپک پہ ختم ہوئی

حیات و موت کی تفصیل کیا کہوں شاہد 
زمیں سے بات چلی تھی فلک پہ ختم ہوئی






Comments