رفو گری میں عبث چارہ گر لگے ھوئے ھیں



رفو گری میں عبث چارہ گر لگے ھوئے ھیں
جو زخم تن پہ تھے اب روح پر لگے ھوئے ھیں

تمہارے پاؤں تلے سیپیاں چٹخ رھی ھیں
تمہارے تاج مین لعل و گہر لگے ھوئے ھیں

تو ایسا کر کے سفینہ نکال کر لے جا
مجھے ڈبونے میں جب تک بھنور لگے ھوئے ھیں

یہ ھم جو عشق سے فارغ دکھائی دیتے ھیں
لگے ھوئے ھیں برنگ ـ دگر لگے ھوئے ھیں

وہ جن کو بانجھ سمجھ کے میں بیچ ایا تھا
اب ان درختوں مین برگ و ثمر لگے ھوئے ھیں

کسے کسے میں سکھاؤں سلیقہ ء پرواز
یہاں تو ھر کس و ناکس کو پر لگے ھوئے ھیں

صلہ ھے یہ ترا ھم شکل ھونے کا شاھد
کہ تیرے جرم مرے نام پر لگے ھوئے ھیں






Comments