تُو مری جان گر نہیں آتی



تُو مری جان گر نہیں آتی 
زیست ہوتی نظر نہیں آتی 

دلربائی و دلبری تجھکو 
گو کہ آتی ہے پر نہیں آتی 

 حالِ دل مثلِ شمع روشن ہے 
گو مجھے بات کر نہیں آتی 

نہیں معلوم دل پہ کیا گزری 
ان دنوں کچھ خبر نہیں آتی 

کیجیے نا مہربانی ہی آکر 
مہربانی اگر نہیں آتی 

دن کٹا جس طرح کٹا لیکن 
رات کٹتی نظر نہیں آتی 





مصنف کے بارے میں


...

خواجہ میر اثر

1735 - 1794 |


اپنے بڑے بھائی خواجہ میر درد کے زیرِ اثر شاعری کی ،




Comments