روز و شب یوں نہ اذیّت میں گزارے ہوتے



روز و شب یوں نہ اذیّت میں گزارے ہوتے
چین آ جاتا اگر کھیل کے ہارے ہوتے

خود سے فُرصت ہی میسّر نہیں آئ ورنہ
ہم کسی اور کے ہوتے تو تمہارے ہوتے

تجھ کو بھی غم نے اگر ٹھیک سے برتا ہوتا
تیرے چہرے پہ خد و خال ہمارے ہوتے

کُھل گئ ہم پہ محبت کی حقیقت ورنہ
یہ جو اب فائدے لگتے ہیں خسارے ہوتے

ایک بھی موج اگر میری حمایت کرتی
میں نے اُس پار کئ لوگ اُتارے ہوتے

لگ گئ اور کہیں عمر کی پُونجی ورنہ
زندگی ہم تری دہلیز پہ ہارے ہوتے

خرچ ہو جاتے اسی ایک محبت میں کبیر
دل اگر اور بھی سینے میں ہمارے ہوتے






مصنف کے بارے میں


...

کبیر اطہر

دسمبر 1962 - | رحیم یار خان


محمد کبیر قلمی نام کبیر اطہر باکمال شاعر اور ادیب ہیں میٹرک گورنمنٹ اجمل باغ ہائی سکول صادق آباد ایف ایس سی گورنمنٹ خواجہ فرید ڈگری کالج رحیم یار خان ایم بی بی ایس کنگ ایڈورڈ میڈیکل کالج لاہور ایف سی پی ایس کالج آف فزیشن اینڈ سرجنز پاکستان کراچی ان آرتھوپیڈک سرجری حال نیشنل آرتھوپیڈک ہاسپیٹل کشمیر روڈ مہر آباد صادق آباد




Comments