بن درھم دینار لگایا دل میں نے



بن درہم دینار لگایا دل میں نے
سرحد کے اُس پار لگایا دل میں نے

دو روحوں کی کیمیکل بانڈنگ کے بعد
کہتی ہو بے کار لگایا دل میں نے

اُن کانوں میں اک سرگوشی کرنا تھی
ایسے بھی اک بار لگایا دل میں نے

میں دوراں کے غم میں گھلتا جاتا تھا
عشق تھا اک درکا ر لگایا دل میں نے

ویرانے میں کارِ محبت کرنے کو
جب پائی دیوار لگایا دل میں نے

جس کو دیکھنا بینائی کا کام نہیں
ایسی اک سرکا ر لگایا دل میں نے






Comments