تجھ کو لکھنا ہے تو ایسا کوئی صفحہ لکھ دے



تجھ کو لکھنا ہے تو ایسا کوئی صفحہ لکھ دے 

جاگتے لفظوں میں خوابوں کا سراپا لکھ دے 

پہلے جو شکل نہیں دیکھی تھی وہ سامنے لا 

پہلے جو نام کتابوں میں نہیں تھا لکھ دے 

گنبد شب میں مہ‌ و نجم سجانے والے 

ان گلی کوچوں کی قسمت میں دریچہ لکھ دے 

ان لکھے لفظوں میں لکھ مژدہ نئے موسم کا 

کہیں مہتاب کہیں گل کہیں چہرہ لکھ دے 

زرد شاخوں میں نئی کونپلیں لکھنے والے 

پیڑ سے ٹوٹتے پتوں کا بھی نوحہ لکھ دے 

یوں بھی ترتیب دے قصہ کبھی فصل گل کا 

باغ میں شمع جلا طاق میں سبزہ لکھ دے 

کھینچ دے خط نئی صبحوں کے افق تا بہ افق 

خاک تیرو کے مقدر میں اجالا لکھ دے 

کھول دے آنکھوں پہ دروازۂ حیرت قیصرؔ 

حرف پنہاں کے معانی سر پردہ لکھ 






Comments