وہ چاہتی ہے



وہ چاہتی ہے میں اس کے ساتھ چلوں
ان راستوں پر جہاں دکھائی پڑیں

اخروٹ کے چھلکوں سے کھیلتی گلہریاں
سفید ملائم اون میں اونگھتے خرگوش
بیریوں کے جھنڈ سے اڑتی خوشنما چڑیاں
آباد چشموں سے پانی پیتے بارہ سینگھے

وہ چاہتی ہے میں اس کے ساتھ چلوں

سبھی پگڈنڈیوں کو بوٹوں تلے کچلتے ہوئے
اس کے ویران آسیب زدہ قلعے کے اندر
 !! جہاں اس کے علاوہ کوئی نہیں رہتا 






Comments