عشرہ ء کشمیر



عشرہ ء کشمیر

یہ کب سے دوزخ مشہور چلا آتا تها
لوگ اس خطے کی بدصورتی پر عاشق تهے
جو بهی دیکهتا بهاگ کے دور چلا جاتا تها
آخر ہمسایوں ماں جایوں کو رحم آیا
ایک نے بهیجے ٹیینک تو دوسرا بم لے آیا
کیمپ لگائے امدادی .. لڑنا سکهلایا
جانگلیوں کو بندوقیں گهڑنا سکهلایا
گولیاں کهانا .. جیلوں میں سڑنا سکهلایا
ہر گز اس کی مدد سے منہ موڑیں گے
ہم کشمیر کو جنت بنا کے چهوڑیں گے





مصنف کے بارے میں


...

ادریس بابر

1974 - |


گوجرانوالہ پاکستان میں پیدا ہونے والے لکھاری نے انجینئرنگ یونیورسٹی لاہور سے الیکٹریکل انجینئرنگ کی. پہلا شعری مجموعہ "یونہی" ۲۰۱۲ میں شائع ہو سکا جسے فیض احمد فیض ایوارڈ سے نوازا گیا۔ اکادمی ادبیات پاکستان کے لیے پاکستانی ادب کے سالانہ انتخاب سمیت پاکستانی نظم کا ستر سالہ انتخاب مرتب کیا. مجلس ترقی ادب لاہور کے لیے اردو غزل کے ستر سالہ انتخاب کی تدوین کی. متعدد زبانوں اور اصناف میں شاعری آور تراجم کے ساتھ ساتھ بابر نے عشرے کی صنف متعارف کرائی جسے بطور خاص جدید ترین لکھنے والوں کی نسل میں قبول عام حاصل ہوا.




Comments